18

مشروبات سے ہونے والے امراض صرف عوام نہیں حکومت کا بھی مسئلہ ہیں، ثناء اللہ گھمن

راولپنڈی(سی این پی)پاکستان نیشنل ہارٹ ایسوسی ایشن (پناہ)کے جنرل سیکرٹری ثناء اللہ گھمن نے کہاکہ شوگری ڈرنکس اوراس سے پیداہونے والے امراض فقط عوام کاہی نہیں بلکہ حکومت کابھی بڑامسئلہ ہے،شوگری ڈرنکس سے پیداہونے والے امراض کے علاج کے لئے اربوں روپے خرچ کئے جاتے ہیں جودانشمندی کاثبوت نہیں،وزیراعظم سے اپیل ہے کہ وہ عوام الناس اوران کی صحت کونقصان پہنچنے والے عوامل پرجامع پالیسی تشکیل دیں،تاکہ صحت مندمعاشرہ تشکیل دیاجاسکے۔ ثناء اللہ گھمن کاکہناتھاکہ شوگری ڈرنکس کااستعمال دل کے عارضہ سمیت ذیابیطس،کینسر،معدہ،موٹاپے سمیت متعدد امراض کی وجہ ہے،شوگری ڈرنکس کااستعمال ہر محفل میں فیشن کی صورت اختیارکرگیاہے،جس سے عوام اوربالخصوص نوجوان نسل کوبچاناہوگا، شوگری ڈرنکس کاباقاعدگی سے استعمال کرنے والے بچوں کی بڑی تعداددل کے امراض،موٹاپے اورذیابیطس جیسے امراض کاشکارہورہی ہے،ہارٹ اٹیک کی ایک بڑی وجہ موٹاپا ہے،اسی طرح شوگری ڈرنکس کے استعمال سے ذیابیطس کے مریضوں میں بھی اضافہ ہواہے،کہاجاتاہے کہ اسطرح کی اشیاء ریونیوجمع کرنے کاذریعہ ہیں،لیکن ہم یہ کہتے ہیں کہ جتناآپ ریونیو جمع کرتے ہیں اس سے کہیں زیادہ ان اشیاء کے استعمال سے پیداہونے والی بیماریوں کے علاج پرخرچ ہوجاتے ہیں،ہم اپنی نوجوان نسل سے انصاف نہیں کررہے،اگرہمیں عوام یابالخصوص نوجوان نسل کی صحت کوبچاناہے توحکومت کونوٹس لیناہوگا،دیگراداروں کی بانسبت وزیراعظم کی بات زیادہ اثرکرے گی،ہم وزیراعظم عمران خان سے اپیل کرتے ہیں کہ شوگری ڈرنکس سے پیداہونے والے امراض کوہرگزنظراندازنہ کیاجائے،بلکہ شوگری ڈٖرنکس بنانے والی کمپنیوں کے لئے موثرحکمت عملی تشکیل دے کراس پرعملی اقدامات اٹھائے جائیں تاکہ صحت مندمعاشرہ کی تشکیل عمل میں لائی جاسکے۔

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں