105

اے پی ایس کے پردیسی—راحیلہ ناز

تحریر:راحیلہ ناز
raheelanaz858@gmail.com

عبد الصمد نے پردیس کی تیاری کر لی ۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا کرتا ۔۔۔۔۔اچھے مستقبل کے لیے اپنوں کو چھوڑنا پڑا۔۔ ماں نے گلے لگایا تو سسک پڑا ۔۔مگر آس ہے امید ہے ۔انشا۶اللہ ایک دن کامیاب ھو کر واپس آۓ گا ۔۔اسی گود میں سر رکھے گا ۔۔۔۔بہن کے آنسو روک نہں سکے ۔۔کہ روشن مستقبل کے خواب سامنے ہیں
آنکھوں میں آنسو ہونٹوں پہ مسکراہٹ لیے عبد الصمد پردیس روانہ ہو رہا ہے ۔۔۔۔۔سب کی دعائيں اور نیک خواہشات اس کے ساتھ ھیں
سوچ رہی تھی آج پردیسیوں پہ کچھ لکھوں ۔کہ تاریخ پہ نظر پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ پردیسی یاد آ گۓ جو آج کے دن اپنے گھروں سے رخصت ہوے تھے ۔۔۔مگر کبھی نہ لوٹنے کے لیے۔۔وہ پردیسی جن کی ماٶں نے ان کو ہنستے ہنستے گلے سے لگایا۔۔ان کی پیشانیاں چومیں۔۔۔۔۔ ہاتھ ہلا کے الوداع کہا ۔۔۔۔۔مگر آخری بار
ہنستے کھیلتے۔۔۔قہقہے لگاتے ۔۔۔۔بس میں بیٹھ کر ایک دوسرے سے اٹھکیلیاں کرتے ۔۔۔۔۔وہ سب سکول پہنچ گۓ ۔۔
کیا معلوم تھا ان کو ۔۔۔کہ فضا کا یہ سکون کس طوفان کا پیش خیمہ ہے ۔۔۔۔۔کیا معلوم تھا اس دن
پشاور نے کس قیامت کا سامنا کرنا تھا ۔۔۔۔کون جانتا تھا سکول کی عمارت گولیوں کی تڑتڑاھٹ سے گونجے گی
کس کو معلوم تھا ظلم انتہا کو ہپہنچ جائے گا ۔۔۔۔خون کی ندیاں بہیں گی ۔۔۔۔۔بربریت حدوں کو چھوجائے گی
ہر طرف ہی بکھرے ہیں جگر گوشوں کے ٹکرے
کھوئے ہوئے بیٹے ۔۔ماں ڈھونڈے کہاں

یہ ماٸیں اب بھی رستہ دیکھ رہی ہیں ۔۔۔۔ان شہیدوں کے لمس کا احساس ان ماٶں کی آنکھوں سے مقدس موتیوں کی لڑی کی صورت چہروں پے بہتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
کیا کوٸ ایسا دن گزرا ہو گا کہ ان کی یاد نہ آی ہو ۔۔۔ ۔۔۔۔۔ارے وہ بھولے ہی کب تھے ۔۔۔۔۔
آج بھی ہر بجتی bell پر مبین شاہ کی ماں دوڑ کر دروازے پر جاتی ھے کہ میرا لال آیا ہو گا
ھمایوں کے پاپا گیلری میں اکیلے تو نہیں۔۔۔۔ھمایوں ان کے پاس ہوتا ہے ۔
ایمل کے والدین کے لیے وقت رک گیا ہے ۔۔۔۔۔۔سال پہ سال گزر گیا مگر آنکھیں اب بھی دروازےپہ ہیں۔۔۔۔۔

132 بچوں کی لاشیں ۔۔۔۔۔۔اساتذہ ۔۔۔۔۔۔پرنسپل ۔۔۔۔۔۔۔۔
قلم بھی نوحہ کناں ہے ۔۔۔۔فضا بھی
ماتم کناں ۔۔۔۔
آنسو سجدہ ریز ۔۔۔ھاتھ دعا کے لیے بلند

وضو ھم اپنے لہو سے کر کے
خدا کے ھاں سرخرو ٹھرے
قسم ہے تم کو ہماری ماؤں کہ
بہتے آنسوٶں کو بھلا نہ دینا

اپنا تبصرہ بھیجیں