حوثی باغیوں کی سعودی عرب کے ساتھ جنگ بندی کی پیشکش

یمن(سی این پی)یمن کے حوثی باغیوں نے سعودی عرب کے ساتھ جاری کشیدگی کے خاتمے کے لیے جنگ بندی کی پیشکش کر دی۔سعودی عرب اور یمن کے درمیان 2015 سے جاری کشیدگی میں اب تک 10 ہزار سے زائد افراد ہلاک اور سینکڑوں زخمی ہو چکے ہیں۔14ستمبر کو سعودی آئل تنصیبات پر حملے کے بعد سے سعودی عرب اور یمن کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہو گیا ہے۔سعودی عرب کی سرکاری آئل ریفائنری پر حملے کی ذمہ داری حوثی باغیوں نے قبول کی تاہم امریکا اور سعودی عرب نے اس حملے کا ذمہ دار ایران کو قرار دیا ہے۔سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کا کہنا ہے کہ ہمیں اپنے ملک کا دفاع کرنا آتا ہے جب کہ ایران نے خبردار کیا ہے کہ اگر امریکا یا سعودی عرب نے حملے کی کوشش کی تو پھر ایک بھرپور اور مکمل جنگ ہو گی۔اب حوثی باغیوں کی سپریم پولیٹیکل کونسل کے رہنما مہدی المشحط کی جانب سے ایک بیان سامنے آیا ہے۔مہدی المشحط نے اپنے ایک ٹی وی بیان میں کہا کہ اگر دوسری جانب سے حملے بند ہو جائیں تو ہم سعودی عرب پر حملے بند کر دیں گے۔اقوام متحدہ نے حوثی باغیوں کی اس پیشکش کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ سعودی عرب اور یمن کے درمیان امن کا ایک قدم ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں