حکومت کسی صورت ہیلتھ ڈیلیوری سسٹم بل سے دست بردار نہیں ہوگی، شوکت یوسف زئی

پشاور(سی این پی)صوبائی وزیر اطلاعات شوکت یوسف زئی کا کہنا ہے کہ ڈاکٹرز اپنے نجی کلینک بند نہیں کرتے سرکاری اسپتال فوراََ بند کردیتے ہیں، حکومت ہیلتھ ڈیلیوری بل سے دست بردار نہیں ہوگی۔تفصیلات کے مطابق وزیر اطلاعات شوکت یوسف زئی نے صوبائی حکومت کی جانب سے پیش کردہ ہیلتھ ڈیلیوی سسٹم کے بل پر ڈاکٹروں کی جانب سے ردعمل پر تبصرہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ سسٹم ساری دنیا میں رائج ہے۔ان کا کہنا تھا کہ قانون سازی کرنا اسمبلی ممبران کا کام ہوتا ہے، ہم جو بھی قانون بنائیں ڈاکٹرز کہتے ہیں ہم نہیں مانتے ۔انہوں نے کئی گروپ بنا رکھے ہیں ،ڈاکٹرز اپنے کلینک بند نہیں کرتے مگر سرکاری اسپتال فوری بند کردیتے ہیں۔شوکت یوسف زئی کا کہنا تھا کہ ڈاکٹرز نے جو مانگا ہم نے قبول کیا اس لئے کہ ہم بہترسسٹم چاہتے ہیں ، یہی ڈاکٹرز بیرون ملک جاکر 12،12گھنٹے بھی کام کرتے ہیں۔ جو سسٹم پوری دنیا میں ہے وہ یہاں لائیں تو انھیں قبول نہیں ہے ۔صو بائی وزیر اطلاعات نے ڈاکٹروں کو مخاطب کرکے کہا کہ ڈاکٹرز مہربانی کریں جتنی تنخواہ لے رہے ہیں اتنی ڈیوٹی بھی تو کریں۔ حکومت کاکام ہوتاہے ایسے قانون بنائے جس سے عوام کوفائدہ ہوڈاکٹرز کا کبھی کوئی گروپ احتجاج کرنے آجاتاہے توکبھی کوئی اور گروپ سامنے آتا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ نجکاری حکومت نے کرنی ہے جب ایسانہیں توڈاکٹرزہڑتال کیوں کررہے ہیں ،دنیا میں رائج سسٹم سے ہیلتھ ڈیلوری کے مسائل ٹھیک ہوئے ہیں ،دنیا بھر میں رائج ہیلتھ ڈیلوری سسٹم سے یہ کیوں گھبرارہے ہیں۔وزیر اطلاعات نے یہ بھی کہا کہ ڈاکٹرز بہانہ کرتے ہیں کہ یہ ہم عوام کیلئے کرتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ حکومت شعبہ صحت سے متعلق بل سے دستبردار نہیں ہوگی، جب سرکاری اسپتال کوپرائیویٹ کیاجائے توتب ہڑتال کریں،جب پرائیویٹائزیشن نہیں کی جارہی توپھر ہڑتال کس بات کی ہورہی ہے۔شوکت یوسف زئی کا کہنا تھا کہ جتنے ملازمین ہیں ان کی تنخواہ میں ایک دن کابھی فرق نہیں آئے گا،ڈاکٹرز عوام کے ساتھ ہی زیادتی کررہے ہیں۔جولوگ احتجاج کرناچاہتے ہیں کریں ہم نئے لوگ لے آئیں گے۔تنخواہ آپ سرکار سے لیتے ہیں اورمن مانی اپنی ،ایسانہیں ہوسکتا۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ حکومت کسی قسم کاغیرقانونی کام اور انتشاراسپتالوں میں برداشت نہیں کرے گی،کوئی اگرکہے گا کہ اوپی ڈی بندکردوں گاتواس کی اجازت نہیں دیں گے۔کسی نے اوپی ڈی بندکرنیکی کوشش کی توقانون اپناراستہ اپنائیگا۔آخر میں انہوں نے ایک بارپھر یقین دہانی کرائی کہ حکومتی اقدامات سے ڈاکٹرزکی سروسزمیں کوئی فرق نہیں آئیگا، بلکہ یہ سسٹم عوام کو بہتر صحت کی سہولیات فراہم کرنے کے لیے ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں