شوکت یوسفزئی کے بیان پرڈاکٹرز،انجینئرزکا پکوڑا ڈے

پشاور(سی این پی)وزیراطلاعات خیبرپختونخواشوکت یوسفزئی کی جانب سے صوبے کے ڈاکٹرزاورانجینئرزکو انوکھے اندازمیں بیروزگاری کا زمانہ یاد دلانا مہنگا پڑا۔ اس حوالے سے دیے جانے والے ایک بیان پر شوکت یوسفزئی شدید تنقید کی زد میں ہیں۔ڈاکٹرز کے احتجاج کرنے پر شوکت یوسفزئی نے ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا تھا کہ یہ کریڈٹ پی ٹی آئی کو جاتا ہے کہ اتنے ڈاکٹرز بھرتی کیے۔ پہلے تو یہ سب بیروزگار تھے اور انجینئرز، ڈاکٹرز خیبربازار میں پکوڑے بیچتے تھے۔ ہم آئے تو چار چارپانچ پانچ ہزار ڈاکٹرز بھرتی کیے۔صوبائی وزیراطلاعات کے بیان کے ردعمل میں سوشل میڈیا پرتنقید کا بازارگرم ہوگیا۔ اس حوالے سے احتجاج کے علاوہ ڈاکٹرز اور انجینئرز نے دلچسپ میمز بھی بنائیں جو خوب وائرل ہو رہی ہیں۔پکوڑے بھیجنے والے انجنیئرز کو بی آر ٹی پشاور میں بھرتی کرنے پر کے پی گورنمنٹ کے شکر گزار ہیں اس صدقہ جاریہ کے بدلے یہ انجنیئرز حکومت کو بہت جلد پکوڑے بھیجنے پر مجبور کرینگے۔بعض صارفین نے شوکت یوسفزئی کو وہ واقعہ بھی خوب یاد دلایا جب پی ٹی آئی کی سوشل میڈیا ٹیم لائیواسٹریمنگ کے دوران کیٹ فلٹر ہٹانا بھول گئی تھی۔ اس بڑی غلطی کے باعث کابینہ اجلاس کے بعد بریفنگ کے دوران شوکت یوسفزئی اور محکمہ اطلاعات کے افسر بلی بنے دکھائی دیتے رہے تھے۔شوکت یوسفزئی کے اس بیان پر ڈاکٹرز اور انجینئرز نے پکوڑا ڈے بھی منایا۔تنقید کا سامنا کرنا پڑا تو شوکت یوسفزئی نے سوشل میڈیا پر وضاحتی بیان بھی جاری کیا۔صوبائی وزیر اطلاعات شوکت یوسفزئی کی ڈاکٹروں کے حوالے سے بیان کی وضاحت۔ ڈاکٹروں کی عزت کرتا ہوں پکوڑے والی بات کسی توہین آمیز زمرے میں نہیں کی مثال دی تھی جس کو میڈیا نے غلط رنگ دیا،اپنے ویڈیو بیان میں ان کا کہنا تھا کہ ڈاکٹراحتجاجا پکوڑے بیچنے آتے تھے خیبربازار میں اوراپنی ڈگریاں تک جلا دیتے تھے۔ میرا بیان اس تناظرمیں تھا لیکن میڈیا پرجو بیان پیش کیا گیا اس سے ایسا تاثر ملتا ہے جیسے کہ میں ڈاکٹرز کی توہین کرنا چاہتا ہوں ۔ ایسا ہرگز نہیں، ڈاکٹرز میرے لیے قابل احترام ہیں۔ یہ سب توہین کے زمرے میں نہیں کہا تھا ، صرف اتنا کہا تھا کہ ہمارے دور میں کافی لوگوں کو ملازمتیں ملیں، 4 سے 5 ہزار ڈاکٹرز ہم نے بھرتی کیے تھے اپنے دور میں اور مزید بھی کریں گے تا کہ ڈاکٹرز کی کمی پوری ہوسکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں