اسلام آباد کی ایک اور نجی یونیورسٹی میں طالب علم جان کی بازی ہار گیا،طلباء انتظامیہ کی غفلت پر سراپا احتجاج

اسلام آباد(سی این پی)وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی نجی یونیورسٹی کامسیٹس میں انعام نامی طالب علم خالق حقیقی سے جا ملا۔طلباء یونیورسٹی انتظامیہ کو انعام کی موت کا ذمہ دار ٹھہرا رہے ہیں ۔ انعام کامسیٹیس یونیورسٹی کے بزنس ایڈمینیسٹریشن ڈپارٹ میں بی بی اے -2 کا طالب علم تھا۔انعام کے ساتھی طلباء کا کہنا ہے کہ انعام کی موت بظاہر دل کا دورہ پڑنے کے باعث ہوئی۔انعام کے ایک ساتھی طالب علم نے سی این پی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ کلا س میں لیکچر کے دوران انعام نے سینے میں تکلیف کی شکایت کی اور کچھ دیر بعد وہ بے ہوش کر گڑ پڑا جس سے اس کا سر بھی پھٹ گیا.

جاںبحق ہونے والے طالب علم انعام کی پروفائیل فوٹو

ساتھی طلباء نے بتایا کہ یونیورسٹی کی ایمبولینس موجود نا ہونے کی وجہ سے پرائیویٹ ایمبولینس منگائی گئی جس کو یونیورسٹی میں داخل نہیں ہونے دیا گیا۔ انعام کے ساتھویں کا کہنا ہے کہ انعام کی موت کی ذمہ دار یونیورسٹی انتظامیہ ہے۔ اگر اسکو بروقت طبی امداد فراہم کی جاتی تو شاید اس کی جان بچ جاتی-

انعام کی موت کے بعد طلباء سراپا احتجاج ہیں

واقعے کا بعد یونیورسٹی کے طلباء سراپا احتجاج ہیں ۔طلباء نے یونیورسٹی سے سامنے موجود پارک روڈ کو بھی بلاک کر دیا ہے۔طلباء کی جانب سے شدید نعرے بازی بھی کی جا رہی ہے اور یونیورسٹی کے ریکٹر کے استعفے کا مطالبہ بھی کیا جا رہا ہے۔دوسری جانب پولیس موقع پر پہنچ چکی ہے اور واقع کی تحقیقات جاری ہیں جبکہ پولیس کے سڑک بلاک کرنے والے طلباء سے بھی مذاکرات جاری ہیں.

کامسیٹس یونیورسٹی میں‌طالب علم کی موت پر طلباء کااحتجاج،ویڈیوز دیکھیں….

اپنا تبصرہ بھیجیں