9 اکتوبرکو تاجروں کی ہڑتال کی کال اورایف اے ٹی ایف کے مطالبات،حکومت کے امتحان بڑھنے لگے

اسلام آباد(سی این پی )حکومت کی جانب سے اپنے کاروبار رجسٹرڈ کروانے اور ریٹیلرز کیلئے شناختی کارڈ یا ٹیکس انوائس لازمی قرار دیئے جانے کے احکامات پر ملک بھر کی تاجر برادری نے 9 اکتوبر کو ا شٹر ڈاؤن ہڑتال کی کال دی ہے۔ تاجر تنظیموں سے شناختی کارڈ کی شرط منوانے میں ناکامی پرحکومت کیلئے معاشی میدان میں نئی مشکلات نے جنم لے لیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایک طرف حکومت کوایک جانب نو اکتوبر کو تاجر برادری کی ہڑتال دوسری جانب ایف اے ٹی ایف کی شرائط پر عملدرآمد کے کڑے امتحان کا سامنا ہے۔ذرائع ایف بی آر کے مطابق ایف اے ٹی ایف سیلز کو دستاویزی بنانے میں ناکامی کو لوکل انڈر انوائسنگ قرار دیتا ہے ۔لوکل انڈر انوائسنگ منی لانڈرنگ کیلئے رقوم فراہم کرنے کا بڑا ذریعہ ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستان ایف اے ٹی ایف اور آئی ایم ایف کو شناختی کارڈ کی شرط سے آگاہ کر چکا ہے۔ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ پاکستان کی جانب سے ایف اے ٹی ایف اجلاس میں موقف اختیار کرے گا کہ آئندہ ماہ سے سیلز پر شناختی کارڈ کی شرط پر عملدرآمد شروع ہو گا کر گے،دوسری جانب تاجر تنظیموں نے بھی شناختی کارڈ کی شرط پر موقف نرم کرنے سے انکار کردیا ہے۔ جبکہ شناختی کارڈ کی شرط پر عملدرآمد میں ناکامی ہونے کی صوت میں آئی ایم ایف سے بھی منفی جائزہ رپورٹ آنے کا خدشہ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں