برطانوی ہائی کمشنر کی جانب سے شیوننگ اور کامن ویلتھ سکالرز کااستقبال

اسلام آباد (سی این پی )اسلام آباد- پاکستان میں برطانوی ہائی کمشنر جین میریٹ نے واپس آنے والے شیوننگ اور کامن ویلتھ سکالرز کا خیرمقدم کیا ہے۔UK میں پوسٹ گریجویٹ تعلیم مکمل کرنے کے بعد، شیونگ کے47 اور کامن ویلتھ46 اسکالرز پر مشتمل 2022-23 کے کوہورٹ کو تعلقات کو فروغ دینے کا موقع ملا جو زندگی بھر ان کے ساتھ رہیں گے۔2022-23 کے گروپس پورے پاکستان سے آئے تھے

جن میں تمام صوبوں کی نمائندگی شامل تھی۔تمام اسکالرز نے آکسفورڈ یونیورسٹی اور لندن سکول آف اکنامکس جیسی معروف یونیورسٹیوں میں ترقی، صحت عامہ، موسمیاتی تبدیلی اور کاروبار سمیت متعدد مضامین کا مطالعہ کرنے کے لیے مکمل فنڈڈ وظائف سے فائدہ اٹھایا۔اب وہ متنوع شعبوں سے تعلق رکھنے والے ہائی پروفائل سابق طلباء کے ایک گروپ میں شامل ہوں گے۔ اس میں گلگت بلتستان ہائی کورٹ کی پہلی خاتون جج آمنہ ضمیر شاہ، ممتاز معذور کارکن عبیہ اکرم اور ہزارہ اقلیت سے تعلق رکھنے والی پہلی خاتون وکیل جلیلہ حیدر شامل ہیں۔پاکستان میں برطانوی ہائی کمشنر جین میریٹ سی ایم جی او بی ای نے اس حوالے سےبات کرتے ہوے کہا کہ ہمارے شیوننگ اور کامن ویلتھ اسکالرشپس پاکستانیوں کے لیے برطانیہ کی تعلیمی پیشکش میں سرفہرست ہیں۔

ان واپس آنے والے اسکالرز نے نہ صرف دنیا کی بہترین یونیورسٹیوں میں تعلیم حاصل کی ہے، بلکہ اپنے پیشہ وارانہ نیٹ ورکس اور برطانیہ میں تجربہ کار زندگی کو بھی بڑھایا ہے۔ وہ اسے اپنے اپنے کیریئر اور شعبوں میں واپسی کے طور پر اپنے ساتھ لے جاتے ہیں۔بلوچستان کے ایک سکالر اورنگزیب کاسی نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوے کہا کہ چیوننگ ایک تبدیلی کا تجربہ تھا، جس نے مجھے علمی اور ثقافتی دونوں لحاظ سے لیس کیا ۔ میں اپنی کمیونٹی میں مثبت تبدیلی لانے کے لیے حاصل کیے گئے عالمی تناظر کو استعمال کرنے کااب مزید انتظار نہیں کرونگا ۔واضح رہے اگلے کامن ویلتھ اسکالرشپس کے لیے درخواستیں ستمبر 2024 میں طلب کی جایں گی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں