بجٹ، بجٹنگ اس کی اقسام…..سیدہ سعدیہ عنبر جیلانی

سال کا چھٹا ماہ، ماہ ِ جون طویل ترین گرم دنوں سے پہچان رکھتا ہے۔ پاکستان میں جیسے ہی اس مہینے کی آمد قریب تر ہوتی ہے۔ ایک لفظ ”بجٹ”کی شورش بھی عروج پہ سنائی دیتی ہے۔ کچھ لوگوں کی اس سے بہتری کی ڈھیروں امیدیں وابستہ ہوتی ہیں۔ تو کچھ لوگ اسے مہنگائی کا ایک نیا بم تصور کرتے ہیں۔ جبکہ بنیادی طور پہ بجٹ ایک مخصوص مدت جسے مالی سال کہا جاتا ہے، کے لئیے ایک حکومتی معاشی لائحہ عمل ہے۔
تاریخی طور پہ دیکھا جائے۔ تو بجٹ ایک لاطینی زبان کے لفظ”بلگا” اور فرانسیسی لفظ”بوجٹ(Bougette)”سے ماخوذ ہے۔ جس کے معنی چمڑے کے کسی تھیلے یا بیگ یا پرس کے ہیں۔
اٹھارہویں صدی میں برطانیہ کے وزیر خزانہ اور پہلے وزیراعظم مسٹر رابرٹ پول جب پارلیمنٹ میں مالی امور کی منظوری کے لئے جاتے۔ تو ان کے پاس ایک چمڑے کا تھیلا ہوتا تھا۔ جس میں ملک کے مالی امور سے متعلقہ اہم دستاویزات ہوتیں۔ بعد میں یہ تھیلا ”بجٹ”کے نام سے مشہور ہوا۔ یوں تاریخی اعتبار سے بجٹ کا آغاز 1745ء میں برطانیہ سے ہوا۔ وقت گزرنے کے ساتھ، یہ اصطلاح آمدنی و اخراجات سے بڑھ کر مالیاتی منصوبہ بندی، مالی امور کے نظم و نسق اور ملکی وسائل کی تفویض کاری کے پورے عمل تک وسعت اختیار کر گئی۔
علم معاشیات کی رو سے اگر ہم بجٹ کی اصطلاح کی تعریف کریں۔ تو ”بجٹ ایک مالیاتی یا زری منصوبہ نما دستاویز ہے۔ جس میں کسی حکومت کو اسے ایک مالی سال کے دوران حاصل ہونے والی وصولیوں جو وہ مختلف ذرائع سے حاصل کرتی ہے۔ اور ایک مالی سال کے دوران کئے جانے والے وہ اخراجات جو وہ مختلف مدوں پر کرتی ہے،کو ظاہر کیا جاتا ہے۔ اس میں نئے مالی سال کے ریونیو و اخراجات کے لیے تخمینہ سازی بھی کی جاتی ہے۔ اور پچھلے مالی سال کے ریونیو و اخراجات کے اعدادوشمار بھی ظاہر کئے جاتے ہیں۔”
کسی بھی ملک کی حکومت کو تین بنیادی مالی فرائض سر انجام دینے پڑتے ہیں:۔
1 ۔معاشی استحکام
جس میں ملکی معیشت سے افراط ِ زر و تفریطِ زر کو کنٹرول کرنا نیز بیروزگاری کی سطح کو کم کرنا ہے۔
2 ۔معاشی ترقی
جس میں ملک کے بنیادی انفراسٹرکچر جن میں ذرائع نقل و حمل، انفرمیشن، ٹیکنالوجی کی ترقی اور توانائی کی بہتر و سستی فراہمی ہے۔ مزید مخصوص صنعتوں کو اعانوں کی فراہمی تاکہ ملکی معاشی افزائش یا معاشی گروتھ یعنی ملکی پیداوار خواہ وہ صنعتی ہو یا زرعی (GDP) میں اضافہ ممکن ہو سکے۔
3 ۔معاشی فلاح و بہبود
جس میں ملکی عوام کو صحت و تعلیم، امن و دفاع، رہائش و نقل و حمل کی سہولیات کی بہتری و اضافہ کرنا شامل ہے۔
کسی بھی حکومت کو اپنے سرکاری معاملات چلانے نیز یہ تمام فرائض ادا کرنے کے لئے آمدنی کی ضرورت ہوتی ہے۔ تاکہ وہ اپنے ان اخراجات کو بخوبی پورا کر سکے۔
حکومت ٹیکسوں، بیرونی سرمایہ کاری، قرضوں اور امداد وغیرہ سے یہ آمدنی حاصل کرتی ہے۔ اور ان اخراجات کی مدوں میں خرچ کرتی ہے۔
اگر تو حکومت کی آمدنی اور اس کے اخراجات آپس میں برابر ہوں۔ تو ایسے بجٹ کو متوازن بجٹ (Balanced Budget) کہا جاتا ہے۔
اگر کسی بجٹ میں حکومت کا ریونیو، اس کے اخراجات سے بڑھ جائے۔ تو اسے” فاضل بجٹ” (Surplus Budget) کہا جاتا ہے۔ جو کہ معاشیات دانوں کی نظر میں اچھا تصور نہیں کیا جاتا۔ کہ اس کا مطلب یہ ہے کہ حکومت عوام سے ٹیکس تو وافر وصول کر رہی ہے۔ مگر ان کی سہولیات اور معاشی ترقی پہ خرچ نہیں کر رہی۔ جس سے بجٹ فاضل بن رہا ہے۔ مگر آج کل کے حالات کے پیش نظر یہ ممکن ہی نہیں کہ کسی ملک کا بجٹ فاضل بن پائے۔
اسی طرح اگر کسی ملک کے اخراجات اس کے ریونیو سے بڑھ جائیں۔ تو اسے خاسر بجٹ یا ”خسارے کا بجٹ”(Deficit Budget) کہا جاتا ہے۔ ترقی پذیر ممالک کا زیادہ تر خاسر بجٹ ہی ہوتا ہے۔ بجٹ میں اس خسارے کو پورا کرنے کے لیے حکومتوں کو سرکاری و بیرونی قرضہ جات اور امداد کا سہارا لینا پڑتا ہے۔ بیرونی قرضوں کی فراہمی کے لیے آئی۔ ایم۔ ایف، ورلڈ بنک اور ایسے کئی ادارے و ممالک وغیرہ اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ قرض لینے والے ممالک کو بھاری سود اور کئی پابندیوں کا بھی سامنا کرنا پڑتا ہے۔
بجٹ سازی کے عمل کو ”بجٹنگ”کہا جاتا ہے۔ کسی ملک کی وزارتِ خزانہ پچھلے مالی سال کے اعداد و شمار اور نئے مالی سال کے اہداف و تخمینوں کو پیش نظر رکھتے ہوئے اگلی مالی مدت کے لئے بجٹ سازی کا عمل سر انجام دیتی ہے۔ اس کے لئے وزارتِ خزانہ ملک کے تمام اہم شعبوں سے ڈیٹا حاصل کرتی ہے۔
معاشیات میں بجٹ سازی کے تناظر میں بجٹ کی 9 ممکنہ اقسام ہیں۔ یا بجٹ 9 طرح کے ہو سکتے ہیں۔
1 ۔جامد بجٹ(Static Budget)
ایک بار بجٹ بننے کے بعد ایسے بجٹ میں کسی قسم کی کوئی تبدیلی نہیں کی جا سکتی۔ یعنی یہ پورے مالی سال میں جامد رہتا ہے۔
2 ۔لچکدار بجٹ (Flexible Budget)
ایسے بجٹ کی ایک بار بجٹ سازی کے بعد مالی مدت کے دوران بوقت ضرورت تبدیلی لائی جا سکتی ہے۔ یعنی شعبوں میں تفویض کردہ وسائل میں بوقت ِ ضرورت تبدیلی ممکن ہے۔
3 ۔فنکشنل بجٹ (Functional Budget)
ملکی معیشت یا کسی آرگنائزیشن کے ہر شعبے کا اس کی ضرورت کے مطابق الگ الگ بجٹ بنانا فنکشنل بجٹ کے زمرے میں آتا ہے۔
4۔ ماسٹر بجٹ (Master Budget)
فنکشنل بجٹ کا مجموعہ ماسٹر بجٹ ہوتا ہے۔ جس میں معشیت کے تمام شبعہ جات کے الگ الگ بجٹ کو یکجا کر دیا جاتا ہے۔
5 ۔زیرو بیسڈ بجٹ ( Zero Baised Budget)
ماضی کے اعداد و شمار سے صرفِ نظر کرتے ہوئے حالیہ آمدنی و ضرورت کے مطابق جو نیا بجٹ بنایا جاتا ہے۔ جس میں پچھلی مالی مدت کا کوئی عمل دخل نہیں ہوتا۔ اسے” زیروبیسڈ بجٹنگ ”کہا جاتا ہے۔ سمجھ لیں کہ یہ پہلی بار حالیہ ضرورت کے مطابق ہوتا ہے۔
6 ۔شراکتی بجٹنگ (Participative Budgeting)
شراکتی بجٹ، بجٹ سازی کا ایک طریقہ ہے۔ جس میں بجٹ سازی کے عمل میں مختلف اسٹیک ہولڈرز، جیسے شہری، رہائشی، یا کسی تنظیم کے اراکین شامل ہوتے ہیں۔ اس نقطہء نظر کا مقصد بجٹ سازی کے فیصلوں میں شفافیت، جوابدہی، اور کمیونٹی کی شمولیت کو بڑھانا ہوتا ہے۔
سادہ الفاظ میں بجٹ سازی کے اس طریقہ ء کار میں کسی معیشت یا آرگنائزیشن کی تمام اپر اور لوئر دونوں درجوں کی منجمنٹ تخمینہ سازی میں اپنی رائے دیتی ہے۔
7۔نافذ کردہ بجٹنگ (Imposed Budget)
نافذ کردہ بجٹنگ میں بجٹ سازی میں کسی ملک یا آرگنائزیشن کی صرف اپر لیول منیجمنٹ ہی حصہ لیتی ہے۔ اور اسے نافذ کر دیا جاتا ہے۔ نافذ کردہ بجٹنگ، شراکتی بجٹنگ کے بالکل منافی بجٹ سازی کا طریقہ ء کار ہے۔
8۔ رولنگ بجٹ
(Rolling Budget Or Budget Rollover)
ماضی کے اعداد و شمار کو پیش ِ نظر رکھ کر مستقبل کے تخمینوں سے مطابقت رکھتا ہوا جو نئی مالی مدت کے لیے نیا بجٹ بنایا جاتا ہے۔ اسے” رولنگ بجٹ ”کہا جاتا ہے۔ زیادہ تر ممالک یا آرگنائزیشنز میں رولنگ بجٹ سازی ہی کی جاتی ہے۔
9 ۔سالانہ بجٹ (Annual Budget)
ایک مالی سال کے لیے کوئی ملک یا آرگنائزیشن اپنے آمدنی و اخراجات کو سامنے رکھتے ہوئے جو بجٹ تیار کرتی ہے۔ اسے” سالانہ بجٹ” کہا جاتا ہے۔
بجٹ کسی بھی ملک یا آرگنائزیشن کے لیئے ایک دو طرفہ بک کیپنگ کی طرح ہے۔ جس میں ایک طرف اس کی آمدنی ہے۔ تو دوسری طرف اس کی حالیہ و مستقبل کے ترقیاتی اخراجات ہیں۔ جن کی مطابقت کا ایک مخصوص مالی مدت(ایک سال) کے لئے پلان بجٹ ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں