ماہ محرم شہادت حضرت عمر فاروق اور حضرت امام حسین کے سانحہ عظیم کی بنا پر بہت اہمیت رکھتا ہے،ڈاکٹر حمیرا طارق

اسلام آباد(سی این پی)محرم الحرام کا آغاز اسلامی تاریخ کےدو اہم واقعات سے ہوتا ہے۔ یکم محرم الحرام کو ہی سیدنا عمر فاروق رضی اللہ تعالی عنہ کی شہادت ہوئی اور 10 محرم الحرام کو نواسہ رسول سیدنا امام حسین رضی اللہ عنہ کی شہادت کا سانحہ عظیم رونما ہوا۔نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی گود میں پرورش پانے والے حضرت علی رضہ اللہ تعالی عنہ اور حضرت فاطمۃ الزہرا رضی اللہ تعالی عنہا کے گھرانے کے چشم و چراغ حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ نے سنت نبوی کی روشنی میں نظام کی اصلاح کے لیے اپنی اور اپنے خانوادے کی قربانی پیش کرنے سے دریغ نہیں کیا۔اس سے اسلامی نظام حکومت اس کا تحفظ اس کی فرضیت اور اہمیت بخوبی عیاں ہو رہی ہے.ان خیالات کا اظہار سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی پاکستان ڈاکٹر حمیرا طارق نے محرم الحرام کی آمد پر اپنے ایک بیان میں کیا۔

انہوں نے کہا کہ سیدنا امام حسین رضی اللہ عنہ کا ظلم کے خلاف جہاد کرنا اس بات کا اعلان تھا کہ خلافت کو ختم کرکے ایک انسان کی بادشاہت کسی صورت قبول نہیں-ماہ محرم کا آغاز ہمیں یہی پیغام یاد دلاتا ہے کہ ہمیں اسلامی نظام حکومت کے قیام کی جدو جہد بالکل اسی طرح کرنی ہے، جس طرح حضرت امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ نے کی ۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ظلم اور استحصال کے نظام نے مہنگائی میں جس حد تک اضافہ کر دیا ہے اس نے عام آدمی کی زندگی اجیرن کر دی ہے اس نظام کی اصلاح لازم ہے اس وقت اپنا کردار ادا کرنا بھی خیر ،بھلائی اور نفع کا کام ہے ۔اور سیدنا امام حسین رضی اللہ تعالی عنہ کی جدوجہد ہمیں یہی پیغام دیتی ہے ۔لہذا مہنگائی ، بد امنی اور لاقانونیت کی چکی میں پسنے والے عوام کو ظلم سے نجات کے لیے عملی جدوجہد آج کی فوری ضرورت ہے اور ہر درد دل رکھنے والے اہل وطن کو آواز بلند کرنی ہے –

اپنا تبصرہ بھیجیں